Follow by Email

Friday, 26 June 2015




 غزل

 کاغذوں  پر مفلسی  کے  مورچے  سر ہو گئے
اور   کہنے  کے   لئے   حالات   بہتر  ہو   گئے

پیاس  کی  شدّت  کے  ماروں کی  اذیت دیکھئے 
خشک  آنکھوں میں ندی کے خواب پتھر ہو گئے 

ذرّا  ذرّا  خوف  میں  ہے  گوشہ  گوشہ  جل رہا 
اب کے  موسم کے نہ جانے کیسے تیور ہو گئے 

سب  کے سب  سلجھا رہے ہیں آسماں کی گتھیاں 
مسلۓ   سارے  زمیں  کے حاشیے   پر  ہو  گئے 

اک    بگولا  دیر  سے نظروں میں ہے ٹھہرا ہوا 
گم  کہاں  جانے  وہ  سارے  سبز  منظر  ہو  گئے 

پھول  اب  کرنے  لگے  ہیں  خودکشی  کا فیصلہ 
باغ  کے  حالات  دیکھو  کتنے  ابتر    ہو   گئے 

ہم نے   تو  پاس  ادب  میں  بندہ  پرور  کہہ  دیا 
اور  وہ  سمجھے  کہ سچ میں بندہ پرور ہو گئے 

منش شکلا  


2 comments:

  1. Bahot hi khoob ghazal hai hamesha ki tarah aik aik sher aapki fikre tazah ka ainadaar hai bahot khoob

    ReplyDelete