Follow by Email

Thursday, 22 November 2012

سفر   کے  ختم  کا  امکان  ہے  کیا
اب   آگے  راستہ  سنسان  ہے  کیا

  عجب اک خوف سا طاری ہے دل پہ
خموشی   میں   نہاں  طوفان ہے کیا

مداوا    کیوں   نہیں  کرتا  ہے آخر
مرے دکھ سے  خدا  انجان  ہے  کیا

لرزتے ہاتھ سے  پڑھتا  ہے  قاصد
کسی  کی  موت  کا  فرمان  ہے  کیا

بچھڑ جانے کی باتیں  کر  رہے  ہو
بچھڑ   جانا   بہت   آسان   ہے  کیا

بہت  غمگین  ہیں   آنکھیں  تمہاری
مرا  منظر   بہت   ویران  ہے  کیا

جو  ہر   لمحہ   بدلتا  جا  رہا  ہے
یہی  چہرہ  مری  پہچان  ہے  کیا
منش شکلا

No comments:

Post a Comment