Follow by Email

Thursday, 22 November 2012

پا ب زنجیر تھیں حالات کی ماری چیخیں
 آہ  بنکر  ہی  نکل  پایئں  ہماری   چیخیں

چیختے   چیختے   کھرام   مچا  رکھا  ہے 
پھر بھی سنتا ہے یہاں کون تمہاری چیخیں

سرد آہوں  میں تھی ویسے ہی بلا کی شدّت 
اس  پہ  سنّاٹے  نے ہیں اور ابھری چیخیں 

سننے والا ہی نہیں تھا  کوئی  تنہائی  تھی 
سسکیاں بن گیئں آخر  میں  ہماری  چیخیں 

پہلے   دیکھا   نہ  سنا  درد  کا  ماتم  ایسا 
وہ  سماعت  پہ  سرکتی  ہوئ  آری  چیخیں 

شور کرنے کی اجازت ہی کہاں تھی ہمکو  
تو سیاہی سے  ہیں  کاغذ  پہ  اتری  چیخیں 

گونجتی  ہی  رہیں  جنگل  کی  فضایں   پیہم 
جب تلک پڑ نہ گیئں سانس پہ بھاری چیخیں 

ہو   گیا    چیخ   کے  خاموش   پرندہ  لیکن 
مدّتوں تک رہیں   ماحول  پہ  طاری  چیخیں 

پھر زمیں  پر  کوئی  ہنگام  ہوا  چاہے  ہے 
ہورہی  ہیں سنا  افلاک  سے  جاری  چیخیں 

ایک  دن پھوٹ کے نکلے گا  صدا  کا   دریا 
ہمنے سینے میں چھپا رکھی ہیں ساری چیخیں 
منش شکلا

No comments:

Post a Comment