Follow by Email

Thursday, 22 November 2012



ہمنے  اپنے  غم  کو   دہرایا   نہیں
وہ   پرانا     گیت   پھر  گایا   نہیں

جسکو  پانے  کی  دعا  مانگا   کے
وہ  ملا بھی   تو  اسے  پایا   نہیں

جسم  کی  سرحد  سے  باھر  آ گیی
اب   محبّت   پر  کوئی   سایا   نہیں

یہ تو ہے اسسے بچھڑ  کر پھر کبھی
دل  کسی  پتھر  سے  ٹکرایا   نہیں

اک دفعہ آے  تھے ہم بھی ہوش میں
پھر  کبھی  ویسا   نشہ  چھایا  نہیں

بعد   مدّت    کے   ملا  تھا  آج    وہ
آج  ہمنے   دل  کو   سمجھایا   نہیں

اسکے  دامن  کی  ہوا  کیا  تھم  گیئ
اب کے موسم  خوشبوئیں  لایا  نہیں

چارہگر  کی  کیا  کہیں  ہمنے  کبھی
خود   کو   اپنا   زخم   دکھلایا  نہیں

آج    کتنی    مدّتوں   کے   بعد   پھر
دل   اکیلے  میں  بھی  گھبرایا  نہیں
منش شکلا






No comments:

Post a Comment