Follow by Email

Monday, 19 November 2012


ہر کسی کے سامنے  تشنلابی  کھلتی  نہیں
اک سمندر کے سوا سبسے ندی کھلتی نہیں

خودنمائی  کے  لئے  اک  آئینہ  بھی  چاہیے
جھیل پہ پڑنے سے پہلے چاندنی کھلتی نہیں

شام کے ڈھلنے سے پہلے یہ چراغاں کس لئے
تیرگی گہری نہ  ہو  تو روشنی  کھلتی  نہیں

دل کے رشتوں میں ضروری ہیں بہت بیباکیاں
ہو  تکلّف   درمیاں   تو  دوستی  کھلتی  نہیں

اب   ہمارے   بیچ  دروازہ  نہیں  دیوار  ہے
اور کوئی دیوار دستک سے کبھی کھلتی نہیں

ہر  نیا  دن  لے  کے  آتا ہے نیی  حیرانیاں
آخری سانسوں  تلک یہ  زندگی  کھلتی  نہیں

ہم جنوں کی سرحدیں   بھی  پار کر  اے  مگر
آگاہی کی  راہ  اسکے  بعد  بھی  کھلتی  نہیں
منش شکلا

No comments:

Post a Comment