Follow by Email

Monday, 4 July 2016




حوصلہ    اب    ناتواں    ہونے    لگا 
میں   شریک    کارواں     ہونے   لگا 

بے  خودی  حد  سے  زیادہ   بڑھ  گیی 
اپنے   ہونے   کا   گماں   ہونے   لگا 

اب    مری    بربادیاں    نزدیک    ہیں 
اب  میں   خود پہ  مہرباں  ہونے  لگا 

اب    میں  اس کی دسترس  میں  آ گیا 
اب  وہ مجھ  سے  بدگماں  ہونے  لگا 

جب   میں خود سے فاصلہ رکھنے لگا 
تب   سے مجھ پر میں عیاں ہونے لگا 

بجھتے  سورج  نے نہ جانے کیا   کہا 
شام    کا   چہرہ   دھواں    ہونے  لگا 

چاند    تارے   آسماں     پر   آ     گئے 
رات    کا   قصّہ   رواں   ہونے    لگا 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment