Follow by Email

Saturday, 2 July 2016





راستوں    پر  عذاب   بیٹھے  تھے 
گھر میں خانہ خراب   بیٹھے  تھے 

مشورے دے  رہے تھے اندھیارے 
سر   نگوں   آفتاب   بیٹھے   تھے 

رات   پر   بھی  شباب  طاری   تھا 
ہم  بھی ہونے خراب بیٹھے   تھے 

کتنا     رنگین    تھا   مرا    صحرا 
کیسے کیسے سراب  بیٹھے  تھے 

اسکی  آنکھوں سے اڈ  گیں نیندیں 
اسکی آنکھوں پہ خواب بیٹھے تھے 

ایک    صفحے  پہ  روک گئے  آکر 
پڑھنے   دل  کی کتاب بیٹھے  تھے 

کتنے    غم   یک  بیک  ابھر   اے 
رخ  پہ  ڈالے  نقاب  بیٹھے   تھے 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment