Follow by Email

Monday, 4 July 2016




نیکی  بدی  میں  پڑ  کے  پریشان  ہو  گیا 
دل  کاروبار  زیست   میں   حیران  ہو  گیا 

جاتی    بہار   لے   گیی   سبزہ   درخت  کا 
دور    خزاں   میں   ٹوٹنا   آسان   ہو   گیا 

کیسی   عجیب   بستیاں   تعمی ر  ہو  گیئں 
یہ    کیا   ہوا   کہ   شہر   بیابان   ہو   گیا 

امید کا  کھنڈر  تھا جو دل میں وہ ڈھہ گیا 
یہ  دشت  آج  ٹھیک  سے  ویران  ہو  گیا 

اک   زخم کا چراغ تھا روشن وہ  بجھ  گیا 
سونا    ہمارے   درد   کا   ایوان   ہو   گیا 

اک  لفظ   نے  خودی  کے  معنی بدل دے 
اک     لفظ   کائنات    کا   عنوان   ہو  گیا 

جو   غلبہ  جنوں  میں   کہا   درج کر  لیا 
دیوانہ     آج    صاحب    دیوان    ہو   گیا 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment