Follow by Email

Monday, 4 July 2016




سر  و سامانیوں  میں جی  رہے ہو 
بڑی   ارزانیوں  میں  جی  رہے  ہو 

بڑی  تکلیف سے گزروگے اک  دن 
بہت  آسانیوں  میں  جی   رہے   ہو 

یہ    دنیا  ہے  یہاں  ایسا  ہی   ہوگا 
عبث   حیرانیوں  میں  جی  رہے  ہو 

کوئی   تو  نام   دے   دو  زندگی  کو 
کیوں بے عنوانیوں میں جی رہے ہو 

محبّت      بندگی      پاس     عقیدت 
یہ  کن  نادانیوں  میں  جی  رہے  ہو 

ابھی  شاداب  لگتا ہے  سبھی  کچھ 
ابھی  طغیانیوں  میں  جی  رہے   ہو 

چلو  صحرا  میں  چل کے غل مچاؤ  
یہ  کن  ویرانیوں  میں  جی رہے ہو 

نہ  تیرا  جائے  ہے  تمسے نہ ڈوبا 
یہ  کیسے  پانیوں میں جی رہے  ہو 

اسیری  سے  جو  نا واقف  ہیں اپنی 
تم  ان  زندانیوں  میں جی  رہے ہو 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment