Follow by Email

Saturday, 1 July 2017



کسی  کردار  کے تیور کبھی  شل  ہو  نہیں  سکتے 
ہماری  داستاں  کے  باب   بوجھل  ہو  نہیں سکتے 

اندھیرا  بھی ضرورت  ہے اجالا بھی  ضرورت  ہے 
ہماری  زندگی   کے   مسلے   حل  ہو  نہیں  سکتے 

تم  اپنی بات کے خود  ہی نہیں  قائل  ہوئے  اب تک 
تمہاری  بات  کے  ہم  لوگ  قائل  ہو  نہیں    سکتے 

ادھورا    دائرہ   ہو    تم     ادھورا   دائرہ   ہیں  ہم 
بنا   یکجا  ہوئے   دونوں   مکمّل  ہو  نہیں   سکتے 

سوالی  ہیں  تمہارے   حسن کے لیکن سلیقے  سے 
تمہارے  آستاں  پہ   آکے  سائل   ہو   نہیں   سکتے 

تمہاری  انگلیوں  میں  کچھ  نہ  کچھ جادو یقیناً  ہے 
وگرنہ  زخم  چھو  لینے سے صندل ہو نہیں  سکتے 

 ادھر  اب   ہوش میں رہنا کسی  صورت  نہیں  ممکن 
 ادھر  مجبوریاں   ایسی   کہ   پاگل  ہو   نہیں  سکتے 

منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment