Follow by Email

Wednesday, 12 July 2017



کوئی  سمجھے تو کیا  سمجھے مرے غم کے معنی بھی 
مرے ہونٹھوں  پہ نغمہ بھی مری آنکھوں میں پانی  بھی 

ترے  چہرے  سے  ملتی  ہے مرے  اشعار  کی  رنگت 
گلابی   ہے   ذرا   سی    اور   تھوڑی    آسمانی   بھی 

ادھر  دہشت  سی  ہوتی ہے شب غم کے  فسانوں  سے 
ادھر   اچھی   نہیں   لگتی    محبّت   کی   کہانی   بھی 

بہت  کچھ  کہ   دیا  اس   نے   اثر  انداز  لفظوں  میں 
بہت  کچھ  که  گئی  لیکن  کسی  کی  بے   زبانی  بھی 

مرا   سب   حال  اس  سے  ہو  بہو  جاکر   بیاں  کرنا 
یہ  جو   تحریر  ہے  خط   میں  یہی  کہنا   زبانی  بھی 

کبھی  میں   پار  کر   جاؤنگا   سرحد  بے   یقینی  کی 
کسی   دن   دور  ہو  جاۓگی  تیری   بد   گمانی   بھی 

بڑی    قیمت   چکانی   پڈ  گئی     شاید   مسرّت   کی 
بہت   غمگین    لگتی    ہے   تمہاری   شادمانی    بھی 
منیش شکلا 


No comments:

Post a Comment