Follow by Email

Tuesday, 18 July 2017



بکھرنے    کا  ارادہ   کر   رہے   ہیں 
ابھی  خود  کو   کشادہ   کر رہے  ہیں 

ابھی     دیوانگی    کی      ابتدا    ہے 
جنوں   حد  سے   زیادہ  کر رہے  ہیں 

سبھی    کچھ   ہو رہا  ہے  بے  ارادہ 
سبھی   کچھ  بے ارادہ  کر  رہے  ہیں 

چھپانا     چاہتے     ہیں   کچھ    یقیناً 
وہ  کچھ  باتیں   زیادہ  کر   رہے   ہیں 

کسی  دن  راے   بھی   ظاہر  کرینگے 
ابھی   تو    استفادہ    کر   رہے   ہیں 

اسی   چوکھٹ  سے اکتا کر اٹھے تھے 
اسی  چوکھٹ  پہ  سجدہ کر  رہے  ہیں 

ہمیں   کہنی   ہے   رنگوں   کی  کہانی 
سو  ہم  لہجے   کو  سادہ کر  رہے ہیں 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment