Follow by Email

Thursday, 20 July 2017



کبھی ضد   پر   اتر  آتے   کبھی   حد   سے    گزر  جاتے 
اگر   یکجائی   مشکل  تھی   تو    بہتر   تھا  بکھر  جاتے 

کبھی    تم   نے  ته    دل    سے   مداوا   ہی   نہیں  چاہا 
وگرنہ زخم ایسے تھے   کہ  چھونے سے  ہی بھر  جاتے 

محبّت    کا    بھرم    رکھے     رہیں    محرومیاں   ورنہ 
میسّر  ہو  گئے  ہوتے  تو    ہم    دل   سے    اتر   جاتے 

کوئی   رہتا    نہیں    اب   اس   گلی   میں   جاننے  والا 
مگر  ڈرتا  ہے  اب بھی دل نہ   جانے  کیوں  ادھر  جاتے 

کسی   صورت    نکلتی    تو    ترے  دیدار   کی  صورت 
تو ہم تجھ سے نہ ملنے  کی   قسم  سے  بھی مکر جاتے 

یہی    اک     آستانہ     ہے    زمانے   میں   خرابوں  کا 
ترے   در   تک  نھیں   آتے   تو   دیوانے   کدھر  جاتے 

بگڈ      کر   ٹھیک    ہونے   نے   ہمیں   برباد   کر  ڈالا 
بگڑتے  ہی  گۓ  ہوتے   تو    ممکن   تھا  سنور   جاتے 
منیش شکلا  

No comments:

Post a Comment