Follow by Email

Friday, 14 July 2017



روشنی  اور  رنگ کے  رقصاں سرابوں کی طرف 
آؤ   تم  کو  لے چلیں  ہم اپنے  خوابوں کی  طرف 

کیسی  کیسی  محفلیں   برپا  کے  بیٹھے  ہیں  ہم 
دیکھ  لو  آکر  کبھی   اپنے   خرابوں  کی   طرف 

بھول  بیٹھے  تھے  زمیں کے آدمی کی سرحدیں 
ہم  بھی  مایل  ہو گئے  تھے  ماہتابوں  کی طرف 

اک  مسلسل  بیکلی  خدشہ  عجب  سی  شورشیں 
غور  سے  دیکھو کبھی روشن شھابوں کی طرف 

زندگی   پہلے  سوالوں   پر  ہمارے   ہنس   پڑی 
پھر  اشارہ  کر  دیا   سوکھے  گلابوں  کی  طرف 

ہم  کتابوں  سے  نکل    کر  زندگی   پڑھنے  گئے 
تھک  کے  لیکن  لوٹ  اے  پھر کتابوں کی طرف 

ہم   کبھی  ٹے   ہی   نہیں  کر   پاے   اپنی  قیفیت 
کب  گناہوں  کی  طرف  ہے کب سوابوں کی طرف 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment