Follow by Email

Friday, 13 May 2016



ہر  صلاح  دنیا  کی  درکنار  کی   ہمنے 
خواب کے اشارے پر جاں نثار کی ہمنے 

یہ  الگ  ترے  در  پر  آج  تک نہیں  اے 
یوں  تری  تمنّا  تو  بےشمار  کی   ہمنے 

کچھ  نہیں ہوا حاصل  اس جہانوردی  سے 
بے  سبب  ردا  اپنی  داغدار  کی    ہمنے 

پھربہل  رہے ہیں ہم عارضی کھلونوں سے 
پھر  فرار  کی  صورت  اختیار  کی ہمنے 

اس  قدر  مسلّط  تھا   یاس  کا   سبق   ہم پر 
قہقہوں کی پرسش  بھی  سوگوار کی  ہمنے 

چار  دن  ہنسے  بولے  ہمنوا  اسیروں سے 
اور  پھر  وہی  حالت  برقرار  کی   ہمنے 

اور  سبسے  تو بولے خوشخرام لہجے میں 
بات جب بھی کی خود سے دلفگار کی ہمنے 

کس قدر مخالف تھی اپنے اصل چہرے سے 
وہ  جو   شکل   دنیا پہ   آشکار  کی  ہمنے 

بارہا  گرے  آکر  زندگی  کے  قدموں  پہ 
روٹھنے  کی  کوشش  تو بار بار کی ہمنے 

منش شکلا  

No comments:

Post a Comment