Follow by Email

Wednesday, 18 May 2016



منتشر کرکے کبھی خود کو مرتب کرکے 
ہمنے دیکھا ہے کئی بار یہی سب کرکے 

شام  ہوتے ہی بیاباں میں بدل جاتے ہیں 
دن کے ہنگام کا ہر  نقش  مخرّب   کرکے 

اپنے   خوابوں  کو چمنزار  بنا لیتے  ہیں 
اپنی راتوں کو ترے غم سے متیّب   کرکے 

اپنی تنہائی میں ہر روز چھلک لیتے ہیں 
اپنے احساس کے کاسے کو لبالب  کرکے 

اپنی  یکرنگ  طبیعت  کو رواں کرتے ہیں 
سرکشی کرکے کبھی خود کو مہزب  کرکے 

روز  ہم  خود   سے سوالات کیا کرتے  ہیں 
جانے کس کس کو خیالوں میں مخاطب کرکے 

ہم  سناتے  ہی  چلے جاتے سحر تک لیکن 
تمنے   قصّہ  کیا دشوار  کہاں  کب   کرکے 

کوئی  پہنچے  نہ  جہاں  دیکھنے  والا  ہرگز 
ہمنے  رکھا  ہے وہاں خود کو  مرجب  کرکے 

اک   سیاہی   سی  نگاہوں  میں  اتر   آےگی 
دن کو دیکھوگے اگر روز یوں ہی شب کرکے 

منش شکلا 

No comments:

Post a Comment