Follow by Email

Wednesday, 18 May 2016



ستاروں   کی صفوں کو تاکتے رہنا قیامت   تک 
ہمارا  کام  ہے  بس  جاگتے  رہنا   قیامت   تک 

ہم اپنے خواب دے جائنگے تم کو خواب میں آکر 
پھر اسکے بعد خود کو دیکھتے رہنا قیامت  تک 

تمھاری  مصلحت  ہے  ہر  صدا  کو منجمد کرنا 
ہمارا   مشغلہ   ہے    چیختے  رہنا   قیامت  تک 

ہمارے  بخت  میں  لکھا  ہوا  تھا  اک  خطا کرنا 
پھر  اسکے  بعد اسکو سوچتے  رہنا قیامت  تک 

تمہیں  الفاظ  کی  صورت  مجسّم کر رہے ہیں ہم 
ہماری   داستاں  میں  گونجتے  رہنا  قیامت  تک 

ہمارے   بعد  ہم  جیسا  کوئی  آنے  نہیں   والا 
ہمارے  بعد  ہمکو  ڈھونڈھتے  رہنا  قیامت  تک 

کوئی  لمحہ  ہمیں  لیکر  گزر  جاتا  تو اچھا تھا 
بہت  مشکل  ہے  تنہا  بیتتے  رہنا  قیامت  تک 

منش شکلا 


No comments:

Post a Comment