Follow by Email

Friday, 27 May 2016





ہماری   بے  گناہی  کے  سبھی  اثبات  رکھے  ہیں 
ہمارے   رخ  پہ  جیتے  جاگتے  حالات  رکھے  ہیں 

انھیں  آنکھوں  میں اگلے  وقت  کی تصویر ابھریگی 
انھیں آنکھوں میں گزرے وقت کے لمحات رکھے ہیں 

عجب  تحریر  ہے اس زندگی کی جانے کیوں اس میں 
تبسّم   کے  حوالے   آنسوں  کے  ساتھ  رکھے   ہیں 

کوئی  ہم   پر   برسنے  کو  یہاں  راضی  نہیں   ہوتا 
سبھی   بادل   تمہارے  نام  کی  برسات  رکھے   ہیں 

بھلا   اس   سے   زیادہ   خیر مقدم   کیا  کرے کوئی 
جہاں   تم  پاؤں  رکھتے  ہو  وہاں ہم ہاتھ رکھے ہیں 

تھکی  ہاری  ہوئی  نیندیں  لئے  ہم  تک  چلے    آنا 
تمھارے  واسطے  ہم  خواب  کی سوغات رکھے ہیں 

ہمارے   آسماں   کے   واسطے   ٹھوڈی  جگہ رکھما 
تمھارے   چاند   تاروں   کے  لئے  ہم رات رکھے ہیں 

منیش  شکلا 

No comments:

Post a Comment