Follow by Email

Thursday, 19 May 2016




خاک    بستہ   شہاب    کتنے     تھے 
نقش      زیر   تراب   کتنے       تھے 

کوئی     تعبیر    تک     نہیں    پہنچا 
شب کی آنکھوں میں خواب کتنے تھے 

خوب   رونق   تھی   تیری  محفل  میں 
ہم   سے   خانہ   خراب     کتنے   تھے 

سب   سوالی    تھے   ماهپاروں    کے 
منکر      ماھتاب         کتنے       تھے 
  
تیری     آواز     پر      صدا        دیتے 
اتنے    حاضر    جواب    کتنے    تھے 

رہران      طرب       ہزاروں        تھے 
مائل        اضطراب      کتنے       تھے 
  
عاشقوں       کا      ہجوم    تھا     لیکن 
عشق      میں      کامیاب    کتنے   تھے 

سطح     صحرا    پہ    کچھ    نظر اے 
محو    صحرا    سراب    کتنے    تھے 

لاکھ    مجنوں   تھے   اس خرابے میں 
دشت     کو    دستیاب     کتنے     تھے 

منش شکلا 

No comments:

Post a Comment