Follow by Email

Saturday, 28 May 2016



اتنی   جلدی   نہ   مان   جایا   کر 
تو    ذرا   بات  کو    بڑھایا    کر 

ابر   ہے   تو   ذرا برس مجھ  پر 
سائباں  ہے   تو سر  پہ سایا  کر 

صرف  چاہت سے کچھ نہیں ہوتا 
آسماں    سر  پہ  مت   اٹھایا   کر 

تجھکو    ہے   واسطہ  محبّت  کا 
تو  محبّت    سے    باز    آیا   کر 

مانا     دنیا    خراب   ہے   لیکن 
مجھسے  ملکر  تو  مسک رایا کر 

آندھیاں        آشیاں      اجاڈینگی 
تو   مگر    آشیاں     بنایا       کر 

غم   کے  ماروں  کی  اہ لگتی ہے 
غم  کے  ماروں  کو  مت ستایا کر 

تیری   باتیں  عجیب   ہوتی    ہیں 
مجھکو  باتوں  میں   مت  لگایا کر 

منش شکلا 

No comments:

Post a Comment