Follow by Email

Thursday, 19 May 2016




تمہاری  داستانوں  کے  بہانے  لکھ  رہے  ہیں   ہم 
حصار ذات کے   تاریک  خانے لکھ  رہے   ہیں   ہم 

ابھی تک لکھ رہے تھے صرف زخموں کا پتا لیکن 
اب اپنے درد کے سارے ٹھکانے لکھ رہے ہیں  ہم 

ہمارے  حال  پر  کوئی  ترس  کہاہے  تو  کیا کہاہے 
ہجوم  یاس  میں  بیٹھے  ترانے  لکھ  رہے  ہیں ہم 

ہمیں  خوابوں  کی  دنیا  تو  میسّر  ہو  نہیں   پائی 
مگر   خوابوب کی دنیا پر فسانے لکھ رہے ہیں ہم 

غزل کہنے کی کوشش کر رہے ہیں دھوپ میں جلکر 
نئی  نسلوں  کی  خاطر  شامیانے  لکھ  رہے  ہیں ہم 

چلو   پھر   زندگی   میں   اک   نیا  کردار  لے آئیں 
کئی   دن  سے  وہی  قصّے پرانے لکھ رہے ہیں ہم 

حقیقت    تو  ہمیں  اجڑے  مناظر  ہی  دکھاتی   ہے 
مگر سپنے نہ جانے کیوں سہانے لکھ رہے ہیں ہم 

ہمیں  سنجیدگی  سے  درج  کرنا  ہے  ہر  اک لمحہ 
کتاب  وقت  میں  اپنے  زمانے  لکھ  رہے   ہیں ہم 

منش شکلا 

No comments:

Post a Comment