Follow by Email

Saturday, 28 May 2016





بات  کہنے  کی  چھپانی  تھی  ہمیں 
کچھ   کہانی  تو  سنانی  تھی   ہمیں 

ہو   گئے   راضی   اجڑنے  کے لئے 
اک   نئی   دنیا   بسانی   تھی   ہمیں 

کب  تلک  طوفان  کی  رکھتے   آنا 
ناؤ   ساحل   پر   لگانی   تھی  ہمیں 

ہم   اکیلے   ہی   سفر   کرتے رہے 
خاک   آخر   تک   اڑانی  تھی  ہمیں 

تمسے   ملکر   خوشنما  لگنے لگی 
شب   ابھی  تک  سرگرانی تھی ہمیں 

جانے کیوں دیکھا ہواء لگتا تھا سب 
ہر   نئی  صورت   پرانی  تھی  ہمیں 

اب  اسی  کو  بھولنے لگتے ہیں ہم 
وہ   کہانی  جو   زبانی   تھی   ہمیں 

منش شکلا 

No comments:

Post a Comment