Follow by Email

Thursday, 26 May 2016




کبھی  غم کبھی شادمانی کا شکوہ 
سبھی  کے لبوں پر کہانی کا شکوم 

کبھی ہے معنی کے غل سے گلا اور 
کبھی  لفظ  کی  بیزبانی  کا   شکوہ 

سفر  ہی  سے بیزار تھی یہ طبیعت 
بھلا  کیا  کریں  ناتوانی  کا   شکوہ 

کنارے پہ ہم ریت سے بدگماں تھے 
سمندر میں ہے گہرے پانی کا شکوہ 

جنہونے  مسلسل  رلایا  ہے  ہمکو 
وہی  کر  رہے  سرگرانی کا  شکوہ 

جو قسمت کو منظور تھا وہ ہوا بس 
عبث  ہے  عبث  جانفشانی کا شکوہ 

شراروں  کی  تحریر  دیکر ہمیں اب 
وہ  کرتے  ہیں شعلہ  بیانی کا شکوہ 

نہیں  زیب  صحرا نوردوں  کو  ہرگز 
برہنہ  سری  لامکانی   کا     شکوہ 

منش شکلا 

No comments:

Post a Comment