Follow by Email

Saturday, 24 June 2017



پہلے   چہرہ    کتاب   بنتا   ہے 
پھر وہ کھل کر نصاب  بنتا  ہے 

جانے کتنے شہاب  بجھتے ہیں 
تب   کوئی   آفتاب    بنتا    ہے 

نور کی پرسشیں  ضروری  ہیں 
نور  سے    ماہتاب    بنتا   ہے 

بس قرینے سے حرف لگ جایئں 
لفظ   سے    انقلاب    بنتا   ہے 

مدّتوں   ہاتھ    میں    نہیں   آتا 
یوں   تو   وہ  دستیاب  بنتا   ہے 

لمحہ   لمحہ   شریک   ہوتا   ہے 
مدّتوں    میں   عذاب    بنتا   ہے 

ہمکو  ہر روز شب سکھاتی ہے 
ہم  سے  ہر دن  خراب  بنتا  ہے 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment