Follow by Email

Thursday, 29 June 2017



سو   کردار   نبھانے  پڑتے   ہیں    ہم   کو 
کیا   کیا   بھیس  بنانے  پڑتے  ہیں  ہم   کو 

آخر  تک   ہم   بے   چہرہ   ہو   جاتے  ہیں 
اتنے   روپ   سجانے   پڑتے  ہیں   ہم   کو 

خد  و  خال   سے  سب  ظاہر ہو  جاتا   ہے 
خد  و  خال    چھپانے   پڑتے  ہیں   ہم   کو 

رفتہ   رفتہ  ہر  شے   سے کٹ  جاتے  ہیں 
اتنے   ربط   نبھانے   پڑتے   ہیں   ہم    کو 

خار    ہمارا     رنگ     اڑاتے   رہتے   ہیں 
گل   سے رنگ  چرانے   پڑتے  ہیں  ہم   کو 

ہم    خود  پر  ہر  بار   بھروسہ  کرتے  ہیں 
دکھ   ہر  بار   اٹھانے   پڑتے   ہیں  ہم    کو 

اپنے     زخم     گنانا    کتنا     مشکل    ہے 
اپنے    زخم   گنانے   پڑتے   ہیں    ہم   کو 

صحرا    کی   ویرانی   سے  دہشت   کھا  کر 
کتنے   شہر    بسانے   پڑتے   ہیں   ہم   کو 

ساری    رات   سلگتے    رہتے   ہیں  تارے 
ساری   رات  بجھانے   پڑتے   ہیں   ہم   کو 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment