Follow by Email

Saturday, 24 June 2017



 درد   چھونے  سے   مرے  بڑھتا  ہے  کیا 
  خار    سینے   میں     کہیں   گڑتا  ہے  کیا 

  کیا     کوئی     مطلب     نہیں    تدبیر    کا 
 زندگی     سے    ہارنا     پڑتا     ہے   کیا 

  تم    نے    تو    بالکل    کنارہ     کر    لیا 
   خود  سے  بھی ایسے کوئی  لڑتا ہے   کیا 

   تم    کبھی   خود  کو  چھڈک   کر    دیکھنا 
    رنگ  مجھ  پر  بھی  کوئی  چڑھتا  ہے  کیا 

    ہے   ابھی    تجھکو    پرستش    پر    یقیں 
    تو   ابھی   تک     مورتیں   گڈھتا  ہے  کیا 

     کیا    یہاں     کوئی     نہیں      حامی     ترا 
     ہر    کوئی    الزام    ہی    مڈھتا   ہے    کیا 

      وقت    کے    صفحے    پلٹتا     جاۓ    ہے 
     رات    دن   مجھکو  کوئی   پڑھتا  ہے  کیا 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment