Follow by Email

Saturday, 24 June 2017



تجھ  سے  ملنے  کا  ارادہ تو نہیں  کرتے ہیں 
پھر  بھی  ملنے  پہ  کنارہ  تو نہیں  کرتے ہیں 

خود  کو  ہر بات  بتاتے  بھی   نہیں ہیں  لیکن 
خود  سے  ہر بات  چھپایا  تو  نہیں کرتے ہیں 

تجھ  سے ملنے تری محفل میں چلے آتے ہیں 
تجھ  سے  الفت کا تقاضا تو  نہیں  کرتے  ہیں 

بس  ترا  نام  لیا  کرتے  ہیں  دل  ہی  دل  میں 
تجھ  کو  ہر  وقت  پکارا  تو  نہیں   کرتے  ہیں 

ہو کے  مجبور  کیا  کرتے   ہیں   تسلیم   ہمیں 
ہم  کو  سب  لوگ  گوارا  تو  نہیں  کرتے  ہیں 

سچ    بتا    یار    کہ    ہم   تیرا   سہارا   بنکر 
تیری  لغزش   میں  اضافہ  تو  نہیں  کرتے ہیں 

کچھ  تو  کہتے  ہیں  چمک  کر  یہ ستارے  آخر 
ہم  سے    ملنے   کا اشارہ  تو  نہیں کرتے  ہیں 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment