Follow by Email

Wednesday, 8 June 2016





تمھیں   آزاد  کرتے  ہیں   یہاں   سے 
چلے     جاؤ   ہماری    داستاں    سے 

لو ہر رستے سے ہٹ جاتے ہیں اب ہم 
گزر   جاؤ   گزرنا    ہو    جہاں    سے 

جہاں  تم  نے  ستاروں  کو چھوا  تھا 
دھواں  اٹھنے  لگا  دیکھو  وہاں  سے 

بہاریں   لوٹ  کر  آی   تھیں     لیکن 
پرندہ    جا  چکا    تھا   آشیاں   سے 

تمھیں   وحشت  کا  اندازہ  نہیں   ہے 
کبھی  بچھڈے  نہیں  ہو  کارواں  سے 

نہ   ایسے  پھوٹ  کر  رویا   کرو  تم 
اتر     آےگا    کوئی     آسماں    سے 

عجب   تھا   جستجو   کا  یہ  سفر بھی 
کہاں   ڈھونڈا   تمھیں   پایا  کہاں سے 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment