Follow by Email

Saturday, 4 June 2016




کتنی  عجلت  میں  مٹا  ڈالا  گیا 
دفعتاً  سب  کچھ  بھلا  ڈالا  گیا 

پھر  وہی ہم  ہیں وہی غار خلا 
سامنے  سے  سب  ہٹا  ڈالا گیا 

کچھ  نہیں  باقی  رہا  یادیں تلک 
آگ  میں  سب  کچھ جلا ڈالا گیا 

ہم چراغوں کی مدد کرتے  رہے 
اور  ادھر  سورج بجھا ڈالا  گیا 

دھجیاں  بکھری  ملیں تعبیر کی 
خواب  کو  جڈ  سے ہلا ڈالا  گیا 

ہمکو  کچھ  آیا  نہیں  آخر  تلک 
ہر  سبق  یوں  تو سکھ ڈالا  گیا 

رہ  گیں   اب  بھی کئی باتیں مگر 
یاد  تھا  جو  کچھ  سنا  ڈالا  گیا 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment