Follow by Email

Thursday, 9 June 2016





پیروں   کی  منمانی  میں  ہم 
گھٹنوں  گھٹنوں پانی میں ہم 

تھوڑی دیر  حقیقت میں  ہیں 
پھر   تبدیل   کہانی   میں  ہم 

منزل    اتنا  دور  نہیں    تھی 
جتنا   تھے  حیرانی   میں  ہم 

ساحل   نے  تو سمجھایا  تھا 
ڈوبے    نافرمانی   میں    ہم 

پردے کے پیچھے عریاں ہیں 
پوشیدہ    عریانی    میں   ہم 

ہم کو  رونا  ہی   واجب   تھا 
ہنستے  ہیں  نادانی  میں   ہم 

اک  دن  تم کو  ہی  رکھ لینگے 
اپنے   پاس   نشانی   میں  ہم 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment