Follow by Email

Monday, 6 June 2016





دل  میں  جانے  کیا  کیا  آنے  لگتا  ہے 
بیٹھے  بیٹھے  جی  گھبرانے  لگتا ہے 


آنے  والے  کل  سے  دہشت  ہوتی ہے 
ماضی  کا  ہر  عکس  ڈرانے  لگتا ہے 

اندر   سے   آوازیں  آنے   لگتی   ہیں 
کوئی  سب  کچھ  یاد  دلانے   لگتا  ہے 

اپنی  ساری  پرتیں  کھلنے  لگتی   ہیں 
بھولا  بسرا  سب  یاد  آنے  لگتا    ہے 

سونے   گلیاروں  سے  ڈرکر ذہن  مرا 
اپنے تہخانوں   میں  جانے  لگتا    ہے 

اک  جنگل  سا  گھ ر آتا  ہے شام  ڈھلے 
 ایک   پرندہ   شور   مچانے    لگتا   ہے 

اک   جھونکا  آتا  ہے  ٹھنڈی  اہوں کا 
سینے  میں  طوفان  اٹھانے  لگت ا ہے 

آنکھوں میں کالکھ سی بھرنے لگتی ہے 
جب   شب  کا  سیا  گھہرانے  لگتا   ہے 

کوئی پہلے پھوٹ کے روتا ہے جی بھر 
پھر خود ہی خود کو سمجھانے لگتا ہے 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment