Follow by Email

Tuesday, 28 June 2016





دن   کا  لاوا  پیتے    پیتے   آخر   جلنے   لگتا    ہے 
ہوتے   ہوتے   شام   سمندر  روز   ابلنے   لگتا   ہے 

ضبط دھواں ہونے لگتا ہے  انگاروں  کی  بارش  میں 
پھول  سا  لہجہ   بھی  اکتا کر  آگ  اگلنے   لگتا   ہے 

تعبیروں کے  چہرے دیکھ کے وحشت ہونے لگتی ہے 
نیند  میں  کوئی ڈر کر  اپنے  خواب  کچلنے  لگتا  ہے 

مشکل  یہ  ہے  وقت  کی  قیمت  تب  پہچانی جاتی ہے 
جب  ہاتھوں  سے  لمحہ  لمحہ  وقت پھسلنے لگتا ہے 

یہ  بھی  ہوتا  ہے  غم  کے  مفہوم  بدلتے  جاتے ہیں 
یوں  بھی  ہوتا  ہے  اشکوں  کا رنگ  بدلنے لگتا ہے 

نم  جھونکے نمکین ہوا کے جسم میں گھلتے جاتے ہیں 
پتھر  کیسا   بھی    ہو    آخرکار    پگھلنے    لگتا   ہے 

بوند   کو  دریا   میں   کھو   دینا   اتنا  بھی  آسان  نہیں 
مدہوشی  تک  آتے  آتے   ہوش   سمبھلنے   لگتا   ہے 
منیش شکلاں 

No comments:

Post a Comment