Follow by Email

Friday, 10 June 2016





اپنے  زخموں  کی اذیت  میں  اضافہ  کرتے 
مر  ہی  جاتے جو دواؤں پہ بھروسا  کرتے 

ہار    کر   تھام   لیا   ہمنے  ہوا   کا   دامن 
تیز  آندھی  میں  بھلا   کسکا  سہارا  کرتے 

دن نکلتے ہی اندھیروں کے حوالے ہونگے 
رات  بیتی  ہے  چراغوں  میں  اجالا  کرتے 

تم   کو معلوم  نہیں  ہے  وہ  جنوں کا عالم 
تم  نے  دیکھا  ہی  نہیں  ہمکو  تمنا  کرتے 

ہوش  اتنا  ہی  جو  رہتا  ترے  دیوانوں  کو 
کیا   کبھی  ترک   محبّت   کا   ارادہ   کرتے 

تو  سمایا  ہی  نہیں  یار کسی بھی  صورت 
ہم   خیالوں   کا   فلک   کتنا   کشادہ  کرتے 

ہم  کو خود ہی نہیں معلوم تھی حالت دل کی 
کیا  کسی اور  پہ  ہم   اس کا  خلاصہ  کرتے 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment