Follow by Email

Tuesday, 7 June 2016




یہ   سب  جو  ہو رہا ہے وہ تو پہلے  بھی  ہوا   تھا 
ہمارے   نام  کا  خطبہ   بھی   کل   جاری   ہوا   تھا 

چمن   کی   پرسشوں   پر  تم   عبث   اترا رہے  ہو 
ہمارا   خیرمقدم    بھی   کبھی   یوں    ہی  ہوا  تھا 

انھیں راہوں سے مثل حکمراں گزرے تھے ہم بھی 
ہمارے   واسطے   بھی    راستہ   خالی   ہوا   تھا 

اسی   منبر   نے گلپوشی  بھی دیکھی تھی  ہماری 
اسی   منبر     پہ   یہ   سارا  بدن  زخمی  ہوا  تھا 

تمھاری   ہی  طرح مایوس  لوٹے  تھے  کبھی ہم 
ہمارا  دل  بھی  محفل  میں یوں ہی  بھاری ہوا تھا 

ہماری کاوشیں بھی  ناتواں ٹھہری   تھیں یوں  ہی 
ہمارا   حوصلہ   بھی   شرم   سے  پانی   ہوا  تھا 

بہت   جلدی   ہمارے  نام   سے  اکتا    گئے  سب 
ہمارے   نام  کا    چرچا   یہاں    کافی   ہوا    تھا 

منیش شکلا 


No comments:

Post a Comment