Follow by Email

Thursday, 9 June 2016




درد  دل  زخم  جگر  پر   کوئی 
اک   غزل   اور  سخنور  کوئی 

چاپ سنتا ہوں مسلسل دل  میں 
ساتھ  میرے  ہے  برابر  کوئی 

کوئی دیکھے تو نھارے پہروں 
روپ  ہے  یا  کہ  سمندر  کوئی 

کوئی  چاہے  تو  دیکھ   لے آکر 
کیسا  سمٹا  ہے  بکھرکر  کوئی 

ساری خوشبو تھی پرائی خوشبو 
ہمکو  رکھتا   تھا   معطر   کوئی 

ہمکو  کرنی  ہیں بہت سی باتیں 
پاس بیٹھے تو گہڈی  بھر  کوئی 

خود  ہی  پیغام  سنا  لے خود کو 
اب    نہ    ایگا      پیامبر   کوئی 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment