Follow by Email

Saturday, 4 June 2016





اس کی محفل میں جا کے لوٹ اے 
ہم  بھی  چہرہ  دکھا  کے لوٹ اے 

تلملانے  کی  بات  تھی  جس    پر 
ہم   فقط   مسکرا  کے  لوٹ   اے  

ہم  گئے تھے بتوں کی بستی میں 
چار   دن  دل  لگا   کے  لوٹ  اے 

کچھ  بھی  رکھا  نہیں  بیاباں میں 
ہم  بھی  کچھ  دن بتا کے لوٹ اے 

قصّہ   گوئی   کا  ہی   زمانہ   تھا 
ہم  بھی  قصّے  سنا  کے لوٹ اے 

وہ  بھی  دامن  بچا  کے  گزرا تھا 
ہم  بھی  نظریں   چرا کے لوٹ اے 

گھر  سے  نکلے  تھے ہم تغیّر کو 
صرف   فتنہ  اٹھا  کے  لوٹ  اے 

منیش شکلا 


No comments:

Post a Comment