Follow by Email

Friday, 10 June 2016





کچھ   اہتمام   جام   و   سبو  ہی  نہیں  ہوا 
محفل میں  ازن  ترک  وضو  ہی  نہیں  ہوا 

سولہ  سنگار  شب  کے  یقیناً  کمال   تھے 
لیکن   وہ  چاند  آج   نمو   ہی  نہیں   ہوا 

باقی تمام رنگ بھی آنکھوں میں بھر  گئے 
اشکوں  کا  رنگ  صرف  لہو  ہی نہیں ہوا 

جب  تار  چک گیا تو رگیں کھینچنے لگے 
پر   زندگی  کا  چاک  رفو  ہی   نہیں   ہوا 

اک  بار  دوستی  میں  وہ صدمے اٹھا لئے 
پھر  اس  کے  بعد  کوئی عدو ہی نہیں ہوا 

ویسے  تو  سارے  روپ دکھاے حیات نے 
لیکن  مرے  جہان  میں  تو  ہی  نہیں  ہوا 

قسمت  کا  کھل  ہاتھ   میں  آیا   تھا  آبجو 
لیکن   میں  آج  خسکگلو  ہی  نہیں   ہوا 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment