Follow by Email

Thursday, 9 June 2016




سخن  بیمار  ہوتا  جا  رہا   ہے 
بہت  دشوار  ہوتا  جا  رہا   ہے 

کبھی جو راحت جاں مشغلہ تھا 
وہ  اب  آزار  ہوتا  جا  رہا   ہے 

سمجھ  میں آ گیا  چاراگروں کی 
مرض  بیکار  ہوتا  جا  رہا  ہے 

نشیبوں میں اترنے کو ہے شاید 
سفر   ہموار  ہوتا  جا  رہا   ہے 

چبھا ہے پاؤں میں کانٹا خرد کا 
جنوں   بیدار  ہوتا  جا  رہا   ہے 

تماشے  سا   تماشا  ہے   ہمارا 
سر   بازار  ہوتا   جا  رہا   ہے 

پرانا  زخم بھرنے کے جتن میں 
نیا   تییار   ہوتا   جا  رہا   ہے 

کبھی  جس پر عقیدہ  تھا  ہمارا 
وہ  بت  مسمار ہوتا  جا رہا ہے 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment