Follow by Email

Tuesday, 7 June 2016




اور      زیادہ    سنجیدہ    ہو    کر   لوٹے 
میلے    سے   ہم    رنجیدہ  ہو  کر   لوٹے 

تیرے     شیدائی  تیرے   الطاف  کے بعد 
اپنے    اوپر   گرویدہ     ہو    کر    لوٹے 

اتنی     طغیانی   تھی    نیند کے  ساحل پر 
سارے    سپنے   نمدیدہ      ہو کر   لوٹے 

پہلے     ہمنے    دوڈ  لگایی  سورج  تک 
پھر  دھرتی   پر  نادیدہ     ہو   کر   لوٹے 

تو    دعویٰ   کرتا   تھا   سہل  بنانے  کا 
لیکن    ہم  تو   پیچیدہ    ہو     کر    لوٹے 

کچھ لمحے جو صرف خیالوں میں گزرے 
وہ   خوابوں   میں  پوشیدہ   ہو  کر  لوٹے 

کوئی    ان   سے   ملکر   شاید  رویا تھا 
ابکے    موسم    بوسیدہ   ہو  کر     لوٹے 
منیش شکلا  

No comments:

Post a Comment