Follow by Email

Wednesday, 8 June 2016




سنجیدگی  سے  سوچنے  بیٹھا  تو  ڈر  گیا 
کل  شب  میں  اپنے  آپ  میں گہرے اتر گیا 

میں  بدحواس  ہو کے  ٹھگا  سا  کھڈا   رہا 
یوم     حیات      شور     مچاتا    گزر    گیا 

دیکھا  جو آئینہ   تو   نگاہوں  کے  سامنے 
یک    لخت    ریگزار  کا   نقشہ   ابھر  گیا 

جسکے  لئے  صلیب  اٹھائی  تھی  جسم کی 
وہ  لمس  میرے  ہاتھ  لگاتے  ہی  مر   گیا 

میں نے تمھارے واسطے باہیں تو کھول دیں 
لیکن      مرا     تمام    اثاثہ     بکھر    گیا 

صدیاں  گزر  چکی  ہیں  نگاہوں کی راہ سے 
کتنا  غبار  وقت  کی  آنکھوں میں  بھر  گیا 

چلنا  تو  دور ٹھیک سے بیٹھے نہیں  کہیں 
رستے  کے  انتظام    میں  سارا  سفر  گیا 
منیش شکلا     

No comments:

Post a Comment