Follow by Email

Wednesday, 8 June 2016






بنی ہے دہشتوں کی اک اندھیری  جھیل  مجھ میں 
تمھارے  خوف  سارے  ہو  گئے  تحلیل  مجھمیں 

میں   کرتا   ہی  رہا    یکجہ   تمنّا   کے    عناصر 
ہزاروں  خواب  ہوتے  ہی گئے  تشکیل  مجھ میں 

ارادے     تو    دل    نادان    کرتا    تھا   مسلسل 
اگرچہ   ہو   نہیں   پایا   کوئی   تکمیل   مجھ میں 

سیاہی   شام   کی   لیکر   وہ   اترا  خلوتوں  میں 
پھر  اسنے نقش کر دی رات کی تفصیل مجھ میں 

مرے  بارے  میں  اتنا  غور  فرمانے  لگے   ہو 
کہیں  تم  ہو  نہ   جاؤ  ہو  بہو  تبدیل   مجھ  میں 

زمانہ   تو   مرے   اندر   کشادہ   ہو   رہا   ہے 
مسلسل  ہو  رہا  ہوں  میں  مگر  تقلیل مجھ میں 

مجھے  اب  روشنی  کے  ساتھ  ہی  رہنا پڑیگا 
جلا کر  رکھ  گیا  وہ  پیار  کی  قندیل  مجھ  میں 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment