Follow by Email

Friday, 24 June 2016





سوچتے   ہیں    کہ   دل   لگانے   دیں 
خود   کو  کچھ  دن فریب   کھانے  دیں 

جی   لگائیں    کہیں    کسی   شے   پر 
خود  کو  خود  سے  نجات   پانے  دیں 

شب کے ہاتھوں میں سونپ دیں خود کو 
بات      کرنے     دیں     گدگدانے   دیں 

دل     تو     سادہ      مزاج    ہے   اپنا 
مانتا    ہے    تو     مان     جانے   دیں 

ضبط      کرتے     رہیں    قیامت    تک 
درد      کو      دائرہ      بڑھانے    دیں 

خود   کو   ساحل   پہ   چھوڈ  دیں  تنہا 
ریت     پر     نقش     پا     بنانے   دیں 

آکے   سرگوشیاں     کرے    ہم    سے 
اسکو       اتنا      قریب       آنے   دیں 

گل   کریں   خواب   کے   چراغوں   کو 
چاند    تاروں   کو    نیند     آنے   دیں 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment