Follow by Email

Friday, 10 June 2016






جب    آنگن   شام    اترنے   لگتی   ہے 
جانے    کیسی  ٹیس ابھرنے  لگتی  ہے 

اٹھتی ہے اک آہ دھواں   بنکر  دل  سے 
پھر آنکھوں میں آنسو بھرنے لگتی ہے 

یاد   جلا  کر   دھونی   بیتی  باتوں  کی 
ہر   غم   کو  تابندہ   کرنے   لگتی  ہے 

دل  کی وحشت اس درجہ بڑھ جاتی  ہے 
چھوٹی  چھوٹی  بات  اکھرنے لگتی ہے 

جب جب میں جڑنے لگتا ہوں بہار سے 
اندر   کوئی  چیز   بکھرنے  لگتی  ہے 

بھر جاتے ہیں آنکھوں میں ایسے منظر 
نیند مری خوابوں سے ڈرنے لگتی ہے 

تنہائی  کا  رقص   ٹھہرنے   لگتا   ہے 
جیسے  جیسے  رات گزرنے لگتی ہے 
منیش شکلا 


No comments:

Post a Comment