Follow by Email

Thursday, 9 June 2016





سفینے  کو  بچانا   بھی  ضروری 
سمندر  سے  نبھانا  بھی ضروری 


یہ  بیگانے  یہ  نامانوس   چہرے 
انہیں  اپنا   بنانا    بھی   ضروری 


چھپانا بھی ہے سب سے حال  اپنا 
مگر  سب  کو  بتانا  بھی  ضروری 


مسلسل حفظ کرنا ہے سبھی  کچھ 
مگر سب کچھ بھلانا بھی  ضروری 


ضرورت  ہے  کبھی  آوارگی    کی 
کبھی کوئی  ٹھکانا  بھی  ضروری 


الجھنا بھی ہے خاروں سے مسلسل 
مگر  دامن  چھڑانا   بھی   ضروری 


کبھی  کچھ  دن بیاباں سے  رفاقت 
کبھی  کچھ دن زمانہ بھی  ضروری 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment