Follow by Email

Thursday, 30 June 2016



کس   قدر  لا علاج  تھے  ہم   بھی 
سر تا پا   احتجاج   تھے  ہم   بھی 

صرف باتوں سے ٹوٹ جاتے تھے 
کتنے  شیشہ  مزاج  تھے  ہم  بھی 

صبح  دم   ہو  گئے  دھواں  چہرہ 
رات  روشن  سراج  تھے  ہم  بھی 

ہم   کو  دار  و رسن  پہ  رکنا  تھا 
مائل   تخت  و  تاج  تھے  ہم  بھی 

خاص   موقعؤں  پہ  یاد آتے  تھے 
بھولا   بسرا  رواج  تھے  ہم  بھی 

نامہ    زندگی    کے   صفحے   پر 
اک   جگہ   اندراج  تھے  ہم  بھی 

تو    نے  کچھ   غور  تو  کیا  ہوتا 
تیری   محفل میں آج تھے ہم  بھی 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment