Follow by Email

Saturday, 4 June 2016




تماشا   ختم  ہو  جانے  کے  تھوڈا  بعد  آتے ہو 
تبھی   ہر  بزم  سے  تم   بارہا   ناشاد  آتے   ہو 

جہاں   پر  شاد  رہنا  ہے  وہاں غمگین رہتے ہو 
جہاں   غمگین  ہونا  ہے  وہاں سے شاد آتے ہو 

کبھی   تم  موج  دریا کی طرح سیراب دکھتے ہو 
کبھی   تم  خشک ہونٹوں  پر لئے  فریاد آتے ہو 

تمہارے ہجر کے مارے ہوئے غمگین تو ہونگے 
تم    اپنے   ہجر   کے   مارے   ہوؤں   آتے  ہو 

بہت   دن  تک  بھٹکتا  ہوں  اکیلا ہی خلاؤں میں 
مگر   پھر  تم  اچانک  بر   سر  روداد   آتے  ہو 

حقیقت  میں مرے غم میں اضافہ کر کے جاتے ہو 
بظاھر    چاراگر    تم     با عث   امداد   آتے   ہو 

یہ  دیگر  بات  ہے  ہنسکر  نظر انداز  کرتے ہیں 
ہمیں   تم   یاد   تو   اکثر   دل   برباد   آتے    ہو 
منیش شکلا 












No comments:

Post a Comment