Follow by Email

Thursday, 9 June 2016




تم  اپنے  خوابوں  کے پیچھے یار مرے حیران  بہت  ہو 
اس کاوش میں ہو سکتا ہے آنکھوں کا  نقصان  بہت  ہو 

اپنی   وحشت  لیکر  صحرا  ناپ  رہے  ہو  عجلت  میں 
ممکن  ہے اس پار کا منظر اس سے بھی ویران بہت ہو 

جس کی  دانائ کے چرچے گونج رہے ہیں  بستی  میں 
ہو  سکتا  ہے  وہ  دانا   بھی  ہم  جیسا  نادان  بہت  ہو 

شاید  اسکو  کھو  دینے  میں   مشکل  آڑے   آتی   ہو 
شاید  اسکو   پا   لینا   ہی  دنیا   میں   آسان   بہت  ہو 

ہو  سکتا  ہے  اصلی  چیزیں  ویرانے میں ملتی   ہوں 
ممکن  ہے  ان  بازاروں میں مصنوعی سامان  بہت ہو 

جن  باتوں  کا  یار  ہمارے  بالکل  پاس  نہیں   کرتے 
ان  باتوں  کا  ہو  سکتا ہے محفل میں اعلان بہت  ہو 

جسکا  کوئی  دھیان  نہیں ہو  وہ مل جاتا ہے  لیکن 
اکثر  وہ  ہی کھو جاتا ہے جس پل کا امکان  بہت  ہو 
منیش شکلا 


No comments:

Post a Comment