Follow by Email

Friday, 10 June 2016




برہمی  کے  شور  میں  سرگوشیاں  بیکار  ہیں 
اب   ہمارے   بیچ   کی   نزدیکیاں   بیکار  ہیں 

اب  تری  خاموشیاں  پڑھنے کی قووت کھو گی 
اب  لب  خاموش  کی سب  عرضیاں بیکار  ہیں 

جانے  کتنے خواب آکر مل گئے اک خواب میں 
اب   ہماری   رات   کی   تنہائیاں   بیکار   ہیں 

اب   کوئی  دریا   ہمارے   درمیاں   بہتا   نہیں 
اب  ہمارے  ساحلوں  کی  کشتیاں  بیکار   ہیں 

اب  چمن  کے  پھول  کھلنے  پر ہی آمادہ نہیں 
اب  بہاروں  کی  یہ  ساری  شوخیاں بیکار ہیں 

اب  چراغاں  ہی  نہیں انکی وضاحت کے لئے 
اب    دیار   شام   کی   تاریکیاں   بیکار   ہیں 

اب  کوئی  اہل  جنوں  کو ڈھونڈھنے  آتا نہیں 
اب  گریباں  کی  بکھرتی  دھجیاں  بیکار  ہیں 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment