Follow by Email

Wednesday, 29 June 2016





کچھ  اداسی  شام  کی  ہلکی   کرو 
آ   بھی   جاؤ  یار  اب  جلدی  کرو 

پڑ  گیا  پھر  سے  اجالوں کا  قحط 
آ کے  تھوڑی  روشنی  جاری  کرو 

ساری  باتیں  لا مناسب  ہیں   یہاں 
خود کو کس کس بات پہ راضی کرو 

رات کے پہلو میں رہنا ہے تو پھر 
رات  کی   فرمائشیں  پوری   کرو 

چاند   سے   پردہ   ہٹاؤ   ابر   کا 
بے  سبب  یہ  رات  مت  کالی کرو 

تمکو جلدی ہے پہنچنے کی  مگر 
موڈ   پر  رفتار   تو   دھیمی  کرو 

بام  و  در  کتنے  پرانے  ہو  گئے 
وقت  ہے  اب  تم یہ گھر خالی کرو 

بس  محبّت  کا  بھرم  رکھے رہو 
جھوٹ  بول و یا  کہ  عیاری  کرو 

کوئی  تو   رستہ   نکالیگی   سحر 
تم ابھی سے جی نہ یوں بھاری کرو 
منیش شکلا 

No comments:

Post a Comment