Follow by Email

Saturday, 4 June 2016







ایک  کحرام  سا  ہر  وقت  اٹھاے   رکھیں


آپ     ماحول   بہر حال   بناۓ     رکھیں 


راز کھل جائے تو سب لوگ بغاوت کر دیں

یہ ضروری ہے کہ ہم پردہ گراۓ   رکھیں


عقلمندی  کا  تقاضا  تو نہیں ہے پھر بھی

ہمنے سوچا ہے تمھیں دوست بناۓ رکھیں



کون  سنتا  ہے یہاں  کسکی صدائیں لیکن

ہم  پہ  لازم  ہے کہ ہم شور مچاۓ  رکھیں



ان  اندھیروں  پہ  کوئی  فرق نہیں پڑنا ہے 

اب  چراغوں  کو بجھا دیں یا جلاے رکھیں 


کتنا  مشکل  ہے  کریں  تلخ  بیانی  اس  پر 

اپنے  ہونتھوں  پہ تبسّم بھی سجاے رکھیں 


صرف   ہونا   ہے   بہرحال   فنا   ہونا ہے 

خود   کو ہم خرچ کریں یا کہ بچے  رکھیں 

منش شکلا 

No comments:

Post a Comment